Yaad – Faiz Ahmed Faiz

دشت تنہائی میں اے جان جہاں لرزاں ہیں

تیری آواز کے سائے ترے ہونٹوں کے سراب

دشت تنہائی میں دوری کے خس و خاک تلے

کھل رہے ہیں ترے پہلو کے سمن اور گلاب

اٹھ رہی ہے کہیں قربت سے تری سانس کی آنچ

اپنی خوشبو میں سلگتی ہوئی مدھم مدھم

دور افق پار چمکتی ہوئی قطرہ قطرہ

گر رہی ہے تری دل دار نظر کی شبنم

اس قدر پیار سے اے جان جہاں رکھا ہے

دل کے رخسار پہ اس وقت تری یاد نے ہات

یوں گماں ہوتا ہے گرچہ ہے ابھی صبح فراق

ڈھل گیا ہجر کا دن آ بھی گئی وصل کی رات

Photographs / Mohsin Khawar

Muse / Zarminay Haq

Makeup / Shainal

http://Instagram.com/mohsinkhawarphotography

Nauman Ijaz by Mohsin Khawar

میرﮮ ھﻢ ﺳﻔﺮ ، ﺗﺠﮭﮯ ﮐﯿﺎ خبر
ﯾﮧ ﺟﻮ ﻭﻗﺖ ھﮯ
ﮐﺴﯽ ﺩُﮬﻮﭖ ﭼﮭﺎﺅﮞ ﮐﮯ ﮐﮭﯿﻞ ﺳﺎ
ﺍِﺳﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ، ﺍِﺳﮯ ﺟﮭﯿﻠﺘﮯ
میرﯼ ﺁنکھ ﮔﺮﺩ ﺳﮯ ﺍَﭦ ﮔﺌﯽ
میرﮮ ﺧﻮﺍﺏ ﺭﯾﺖ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﻮ ﮔﺌﮯ
میرﮮ ھﺎتھ ﺑﺮﻑ ﺳﮯ ھﻮ ﮔﺌﮯ

میرﮮ ﺑﮯ ﺧﺒﺮ، تیرﮮ ﻧﺎﻡ ﭘﺮ
ﻭﮦ ﺟﻮ ﭘﮭﻮﻝ ﮐﮭﻠﺘﮯ ﺗﮭﮯ ھﻮﻧﭧ ﭘﺮ
ﻭﮦ ﺟﻮ ﺩﯾﭗ ﺟﻠﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﺑﺎﻡ ﭘﺮ
ﻭﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﺭھﮯ ﻭﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﺭھﮯ

ﮐﮧ ﺟﻮ ﺍﯾﮏ ﺭﺑﻂ ﺗﮭﺎ ﺩﺭﻣﯿﺎﮞ ، ﻭﮦ ﺑﮑﮭﺮ ﮔﯿﺎ
ﻭﮦ ھَﻮﺍ ﭼﻠﯽ ﮐﺴﯽ ﺷﺎﻡ ﺍﯾﺴﯽ ھَﻮﺍ ﭼﻠﯽ
ﮐﮧ ﺟﻮ ﺑﺮﮒ ﺗﮭﮯ ﺳﺮِ ﺷﺎﺥِ ﺟﺎﮞ ، ﻭﮦ ﮔﺮﺍ ﺩﯾﮯ
ﻭﮦ ﺟﻮ ﺣﺮﻑ ﺩﺭﺝ ﺗﮭﮯ ﺭﯾﺖ ﭘﺮ، ﻭﮦ ﺍُﮌﺍ ﺩﯾﮯ

ﻭﮦ ﺟﻮ ﺭﺍﺳﺘﻮﮞ ﮐﺎ ﯾﻘﯿﻦ ﺗﮭﮯ
ﻭﮦ ﺟﻮ ﻣﻨﺰﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﺍﻣﯿﻦ ﺗﮭﮯ
ﻭﮦ ﻧﺸﺎﻥِ ﭘﺎ ﺑﮭﯽ ﻣﭩﺎ ﺩﯿﮯ

میرﮮ ھﻢ ﺳﻔﺮ، ھﮯ ﻭھﯽ ﺳﻔﺮ
ﻭﮦ ﺟﻮ ھﺎتھ ﺑﮭﺮ ﮐﺎ ﺗﮭﺎ ﻓﺎﺻﻠﮧ
ﮐﺌﯽ ﻣﻮﺳﻤﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﺪﻝ ﮔﯿﺎ
ﺍُﺳﮯ ﻧﺎﭘﺘﮯ، ﺍُﺳﮯ ﮐﺎﭨﺘﮯ
میرﺍ ﺳﺎﺭﺍ ﻭﻗﺖ ﻧﮑﻞ ﮔﯿﺎ

ﺗُﻮ میرﮮ ﺳﻔﺮ ﮐﺎ ﺷﺮﯾﮏ ھﮯ
ﻣﯿﮟ تیرﮮ ﺳﻔﺮ ﮐﺎ ﺷﺮﯾﮏ ھُﻮﮞ
ﯾﮧ ﺟﻮ ﺩﺭﻣﯿﺎﮞ ﺳﮯ ﻧﮑﻞ ﮔﯿﺎ
ﺍُﺳﯽ ﻓﺎﺻﻠﮯ ﮐﮯ ﺷﻤﺎﺭ ﻣﯿﮟ
ﺍُﺳﯽ ﺑﮯ ﯾﻘﯿﮟ ﺳﮯ ﻏﺒﺎﺭ ﻣﯿﮟ
ﺍُﺳﯽ ﺭھﮕﺰﺭ ﮐﮯ ﺣﺼّﺎﺭ ﻣﯿﮟ

تیرﺍ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻭﺭ ھﮯ
میرﺍ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻭﺭ ھﮯ

امجد اسلام امجد

Photographs / Mohsin Khawar
Featuring / The Living Legend Nauman Ijaz
Styling / Headlines Salon by Mikaal Zulfiqar
Poem / Amjad Islam Amjad

http://instagram.com/mohsinkhawarphotography

Dream – A Photographic Poem

The Poem Of Light

تم آئے ہو، نہ شبِ انتظار گذری ہے
تلاش میں ہے سحر بار بار گذری ہے
فیض